in

کونسل میں انتشار، صدر کہہ رہے ہیں سب ٹھیک ہے، ارکان کہہ رہے ہیں صرف 4-5 لوگ کونسل چلا رہے ہیں۔

کونسل میں انتشار، صدر کہہ رہے ہیں سب ٹھیک ہے، ارکان کہہ رہے ہیں کہ صرف 4-5 لوگ کونسل چلا رہے ہیں۔

RANCHI, LAGATAR URDU NEWS

ونیت اپادھیائے Vinit Upadhyay

رانچی: جھارکھنڈ اسٹیٹ بار کونسل میں اندرونی سیاست اور رسہ کشی اپنے عروج پر ہے۔ کونسل ممبران میں کئی معاملات پر اختلافات دیکھے گئے اور اب کچھ کونسل ممبران نے کہا ہے کہ کونسل میں 4-5 ممبران مکمل طور پر غالب ہیں اور چیئرمین صرف ان کی بات سنتے ہیں۔ تاہم سپیکر نے ان باتوں کو یکسر مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسا نہیں ہے۔ اس خبر میں ہم آپ کو بتا رہے ہیں کہ کونسل میں اس وقت کس قسم کی سیاست چل رہی ہے اور کونسل ممبران کس طرح دھڑے بندی کی باتیں کر رہے ہیں۔

ریاستی بار کونسل کی واحد خاتون رکن رنکو بھگت نے الزام لگایا ہے کہ اسپیکر 4-5 اراکین کی باتوں کی بنیاد پر کوئی بھی فیصلہ لیتے ہیں۔ اپنے ارادے کی تکمیل کے لیے وکلاء کے مفاد میں آواز اٹھانے والے اراکین کی آواز کو دبایا جا رہا ہے۔ کئی فیصلے بھی ہوئے جن کی معلومات انہیں کونسل کے خط سے ملی ہیں۔ جس کے باعث کونسل کے کئی ارکان نے فیس میں اضافے کے خلاف بلائے گئے اجلاس میں شرکت نہیں کی۔

تیسری بار بار کونسل کے رکن منتخب ہونے والے ہیمنت شکاروار نے کہا ہے کہ اس بار کونسل کام نہیں کر رہی ہے۔ کونسل کو وکلاء کی فلاح و بہبود کے لیے بہت سے کام کرنے تھے لیکن اراکین کے اتحاد نہ ہونے کی وجہ سے وکلاء کی فلاح و بہبود کے لیے کوئی کام نہیں کیا جا رہا۔

اپنی ہٹ دھرمی کے لیے مشہور رامسبھاگ سنگھ نے تو یہاں تک کہہ دیا کہ بار کونسل کے فیصلے غیر قانونی ہیں، اگر کونسل کی کمیٹی بدلی تو میں سب کے خلاف ایف آئی آر درج کروں گا۔ رامسبھاگ سنگھ نے کہا کہ کوئی بھی فیصلہ لینے کے بعد جنرل باڈی کی میٹنگ میں اس کی منظوری دی جارہی ہے۔

وکالت کے معاملے پر جارحانہ انداز میں لڑنے والے سنجے ودروہی اس سے متفق نہیں ہیں۔ انہوں نے کہا ہے کہ جن ممبران نے کہا ہے کہ کونسل کو صرف چند لوگ چلا رہے ہیں وہ احساس کمتری کا شکار ہیں اور اگر تمام ممبران کا بھرپور تعاون حاصل ہو جائے تو جھارکھنڈ سٹیٹ بار کونسل کا شمار ملک کی سرکردہ کونسل میں ہو گا۔

کونسل کے رکن رادھے شیام گوسوامی نے کہا ہے کہ کچھ لوگ مایوسی میں ہیں، اس لیے وہ کہہ رہے ہیں کہ صرف 4-5 لوگ کونسل چلا رہے ہیں۔ کیونکہ وکلاء کی سپریم باڈی کو تمام منتخب اراکین مل کر چلاتے ہیں۔

‘لال سنگھ چڈھا’ دیکھ کر وریندر سہواگ اور سریش رائنا ہو گئے جذباتی

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Written by Arif

'لال سنگھ چڈھا' دیکھ کر وریندر سہواگ اور سریش رائنا ہو گئے جذباتی

‘لال سنگھ چڈھا’ دیکھ کر وریندر سہواگ اور سریش رائنا ہو گئے جذباتی

ٹی ایم سی کے قومی نائب صدر پون ورما نے دیا استعفیٰ

ٹی ایم سی کے قومی نائب صدر پون ورما نے دیا استعفیٰ